Home Authors Posts by HairStyleBy

HairStyleBy

577 POSTS 0 COMMENTS

پشاور اور گردونواح میں زلزلے کے جھٹکے

0

زلزلے کا مرکز سوات سے 20 کلو میٹر شمال مغرب میں تھا، زلزلہ پیما مرکز۔  : فوٹو: فائل

زلزلے کا مرکز سوات سے 20 کلو میٹر شمال مغرب میں تھا، زلزلہ پیما مرکز۔ : فوٹو: فائل

پشاور: شہر میں آنے والے زلزلے کے جھٹکوں کی شدت ریکٹر اسکیل پر 4 اعشاریہ 2 ریکارڈ کی گئی۔

ایکسپریس نیوزکے مطابق پشاور اور اس کے گردو نواح میں زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کئے گئے، ریکٹر اسکیل پر زلزلے کی شدت 4 اعشاریہ 2 ریکارڈ کی گئی۔

زلزلہ پیما مرکز کا کہنا ہے کہ زلزلے کا مرکز سوات سے 20 کلومیٹر شمال مغرب میں تھا، زلزلہ اس قدر شدید تھا کہ لوگ کلمہ طیبہ کا ورد کرتے ہوئے گھروں سے باہر نکل آئے، تاہم ابھی تک کسی جانی یا مالی نقصان کی اطلاعات موصول نہیں ہوئیں۔

 

Source link

عمران خان نے افغان حکومت اورطالبان کو مذاکرات کیلئے زور دیا ہے، امریکی محکمہ خارجہ

0

افغانستان میں امریکا اور نیٹو فورسز نے بہت قربانیاں دی ہیں، مورگن اورٹیگس ۔ فوٹو : فائل

افغانستان میں امریکا اور نیٹو فورسز نے بہت قربانیاں دی ہیں، مورگن اورٹیگس ۔ فوٹو : فائل

 واشنگٹن: ترجمان امریکی محکمہ خارجہ مورگن اورٹیگس کا کہنا ہے کہ عمران خان نے افغان حکومت اور طالبان کو مذاکرات کے لئے زور دیا ہے۔

ترجمان امریکی محکمہ خارجہ مورگن اورٹیگس نے نیوز بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور وزیراعظم پاکستان عمران خان کی پہلی ملاقات ہوئی، عمران خان سے وزیرخارجہ پومپیو کی بھی اہم ملاقات ہوئی۔

یہ بھی پڑھیں :پاکستان نے دورے کی دعوت دی تو قبول کریں گے، افغان طالبان

مورگن اورٹیگس نے کہا کہ عمران خان نے افغان حکومت اور طالبان کو مذاکرات کے لئے زور دیا ہے، افغانستان میں امریکا اور نیٹو فورسز نے بہت قربانیاں دی ہیں، امریکا نےافغانستان میں اربوں ڈالرزخرچ کیے، چاہتے ہیں کہ افغان عوام اپنے مستقبل کا فیصلہ خود کریں۔

Source link

کیارا ایڈوانی کو عالیہ بھٹ کی وجہ سے نام بدلنا پڑگیا

0

میں نہیں چاہتی تھی کہ یکساں ناموں کی وجہ سے شائقین شش و پنج کا شکار ہوں، کیارا ایڈوانی۔ فوٹو: فائل

میں نہیں چاہتی تھی کہ یکساں ناموں کی وجہ سے شائقین شش و پنج کا شکار ہوں، کیارا ایڈوانی۔ فوٹو: فائل

 ممبئی: بالی ووڈ کی ابھرتی ہوئی خوبرو اداکارہ کیارا ایڈوانی نے اپنے اصل نام سے پردہ اُٹھا دیا۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق بالی ووڈ میں باکس آفس پر ریکارڈ توڑ بزنس کرنے والی فلم ’کبیر سنگھ‘ میں مرکزی کردار ادا کرنے والی کیارا ایڈوانی نے اپنا فلمی نام رکھنے کی وجہ بتاتے ہوئے انکشاف کیا کہ میرا اصل نام عالیہ ایڈوانی ہے لیکن 2014 میں ریلیز ہونے والی ڈیبیو فلم سے اب تک میرا نام کیارا ایڈوانی چلا آرہا ہے ۔

کیارا نے مزید بتایا کہ بالی ووڈ میں پہلے ہی عالیہ بھٹ موجود ہیں جوکہ ایک سپر اسٹار ہیں اس لئے میں عالیہ کے نام سے اپنی شناخت نہیں کرانا چاہتی تھی بلکہ اپنی خود کی ایک پہچان بنانا چاہتی تھی کیوں کہ میں نہیں چاہتی تھی کہ یکساں ناموں کی وجہ سے شائقین شش و پنج کا شکار ہوں۔

کیارا ایڈوانی نے مزید انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ ’میں نے اپنا نام ’کیارا فلم ’ انجانا انجانی‘ میں ‘ پریانکا چوپڑا کے نام ’کیارا‘ سے متاثر ہو کر رکھا ہے۔ فلم کے ایک سین میں  پریانکا اپنا تعارف کرواتے ہوئے کہتی ہیں کہ ’ہائے میں کیارا ہوں‘۔ وہ ڈائیلاگ دیکھ کر مجھے نام بہت پسند آیا۔ اگر میری کوئی بیٹی ہوتی تو میں اسے کیارا کے نام سے پکارتی لیکن اس سے قبل مجھے نام کی ضرورت تھی اس لئے میں نے اس نام کا انتخاب کیا جوکہ آج میری پہچان بن گیا ہے۔

یہ خبر بھی پڑھیں: شاہد کپور نے سلمان خان کو پیچھے چھوڑ دیا

واضح رہے کہ سندیپ وانگا کی ہدایتکاری میں بننے والی فلم ’کبیر سنگھ‘ میں کیارا ایڈوانی نے شاہد کپور کے ساتھ مرکزی کردار ادا کیا تھا۔ تاہم بہترین کہانی کی بدولت 70 کروڑ کے بجٹ سے تیار ہونے والی فلم اب تک ایک ماہ میں 300 کروڑ سے زائد کا بزنس کر چکی ہے۔

Source link

پاکپتن اراضی کیس؛ پنجاب اینٹی کرپشن کو نوازشریف سے بیان لینے کی اجازت مل گئی

0

پنجاب اینٹی کرپشن کی 3 رکنی ٹیم 30 جولائی کو کوٹ لکھپت جیل نوازشریف کا بیان ریکارڈ کرے گی۔ فوٹو:فائل

پنجاب اینٹی کرپشن کی 3 رکنی ٹیم 30 جولائی کو کوٹ لکھپت جیل نوازشریف کا بیان ریکارڈ کرے گی۔ فوٹو:فائل

لاہور: پنجاب اینٹی کرپشن نے پاکپتن دربار کی غیر قانونی اراضی الاٹمنٹ کیس میں سابق وزیراعظم نوازشریف سے تحقیقات کے لئے بیان ریکارڈ کرنے کی اجازت طلب کی تھی۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق پنجاب اینٹی کرپشن نے پاکپتن دربار کی غیر قانونی اراضی الاٹمنٹ کیس کے بارے میں دوبارہ تحقیقات شروع کردی ہیں، اور اس سلسلہ میں محکمہ اینٹی کرپشن نے سابق وزیراعظم نوازشریف کا تفتیش کے لئے بیان ریکارڈ کرنے کیلئے محکمہ داخلہ پنجاب سے اجازت لے لی ہے۔

اینٹی کرپشن کی جانب سے محکمہ داخلہ کو لکھے گئے مراسلہ میں استدعا کی گئی تھی کہ نوازشریف سے پاکپتن اراضی کیس کے بارے میں اینٹی کرپشن کی 3 رکنی ٹیم نے بیان ریکارڈ کرانا ہے اس کے لئے ان کو اجازت دی جائے۔ اجازت کے بعد اب تین رکنی ٹیم 30 جولائی کو کوٹ لکھپت جیل جائے گی اور نوازشریف کا بیان ریکارڈ کرے گی۔

ذرائع کے مطابق اینٹی کرپشن کی تین رکنی ٹیم میں ساہیوال کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر انویسٹی گیشن غضنفر طفیل، راشد مقبول اسسٹنٹ ڈائریکٹر لیگل اینٹی کرپشن اور زاہد علی انسپکڑ ہیڈ کوارٹر اینٹی کرپشن ساہیوال شامل ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکپتن اراضی کیس 30 سال پرانا کیس ہے، 1985 میں نوازشریف نے بحیثیت وزیراعلی پنجاب اپنے سیکرٹری کوحکم دیا کہ اوقاف کی زمین کی الاٹمنٹ کرائی جائے، اور محکمہ اوقاف پاکپتن کی 14 ہزار 398 ایکڑ اراضی کی غیرقانونی طورپر الاٹمنٹ کرائی گئی۔

Source link

کراچی میں گرج چمک کے ساتھ بارشوں کی پیش گوئی

0

اتوار سے منگل کے دوران کراچی سمیت اندرون سندھ موسلا دھار بارشوں کی ایڈوائزری  جاری کردی گئی ہے

اتوار سے منگل کے دوران کراچی سمیت اندرون سندھ موسلا دھار بارشوں کی ایڈوائزری جاری کردی گئی ہے

کراچی: محکمہ موسمیات نے اتوار سے منگل کے دوران کراچی سمیت سندھ  اور بلوچستان میں تیز ہواؤں آندھی اور گرج چمک کے ساتھ مون سون بارشوں کی پیش گوئی کی ہے۔

ایکسپریس نیوزکے مطابق محکمہ موسمیات نے پنجاب اور خیبرپختون کے بعد سندھ اوربلوچستان میں تیز ہواوں آندھی اور گرج چمک کے ساتھ مون سون بارشوں کی پیش گوئی کی ہے، اور اتوار سے منگل کے دوران کراچی سمیت اندرون سندھ میں تیز بارشوں کی ایڈوائزری بھی جاری کردی گئی ہے۔

محکمہ موسمیات کے مطابق ملک کے بالائی علاقوں پر موجود سلسلہ آئندہ 24 سے 48 گھنٹوں کے دوران وسطی اور جنوبی حصوں میں پھیل جائے گا، ہوا کا کم دباؤ اتوار کے روز راجستھان انڈیا پر بنے گا، جس کے تحت سندھ اور بلوچستان میں بارشیں ہوں گی۔

محکمہ موسمیات کی پیش گوئی کے مطابق اتوار سے منگل کے دوران کراچی، حیدرآباد، میر پورخاص، ٹھٹھہ، شہید بے نظیرآباد، سکھر، لاڑکانہ، ژوب، سبی، نصیرآباد ڈویژن، قلات اور مکران ڈویژن میں اکثر مقامات پر تیز ہواوں کے ساتھ گرج چمک کے ساتھ بارش ہوسکتی ہے، اور چند مقامات پر درمیانی سے موسلادھار بارش کا بھی امکان ہے۔

پیر اور منگل کے دوران موسلادھار بارش کے باعث کراچی، ٹھٹھہ اور حیدرآباد میں نشیبی علاقے زیر آب آنے کا امکان ہے، جب کہ قلات، سبی، ژوب ڈویژن میں مقامی دریاؤں برساتی نالوں میں طغیانی کا خدشہ ہے، جس کے لئے تمام متعلقہ اداروں کو احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی ہدایت کردی گئی ہے۔

 

Source link

جعلی حکومت اور سلیکٹڈ وزیراعظم کو نہیں مانتے، بلاول بھٹو زرداری

0

ناکام پالیسیوں کی وجہ سے صوبے دیوالیہ ہورہے ہیں، بلاول بھٹو زرداری فوٹو: فائل

ناکام پالیسیوں کی وجہ سے صوبے دیوالیہ ہورہے ہیں، بلاول بھٹو زرداری فوٹو: فائل

 کراچی: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ جعلی حکومت اور سلیکٹڈ وزیراعظم کو نہیں مانتے۔

باغ جناح کراچی میں اپوزیشن کے جلسہ عام سے خطاب کے دوران بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ ہماری اپنی اپنی جماعتیں ہیں مگر جمہوریت کے لیے ہم نےمشترکہ جدوجہد کی، پاکستان کا متفقہ آئین ذوالفقار علی بھٹو شہید نے مفتی محمود اور دیگر کے ساتھ مل کر بنایا۔ ہم نے مسلم لیگ (ن) کے ساتھ میثاق جمہوریت پر دستخط کئے۔ ہم نےصوبہ سرحد کو خیبرپختونخوا کا نام دیا، 18ویں ترمیم منظور کرکے 1973 کے آئین کو بحال کیا۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ 25 جولائی کو ہم پر ایک سلیکٹڈ حکومت مسلط کی گئی، سلیکٹڈ حکومت نے عوام کا جینا حرام کردیا، مہنگائی کا بم گرایا، ہم اس حکومت کے خلاف علم بغاوت بلند کررہے ہیں، انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے ہم سب ایک ہوچکے ہیں، اس لئے کہ ملک کا ہر طبقہ حکومت کے نشانے پر ہے، اس وقت صرف ایک صوبہ ہی نہیں پورا وفاق نشانے پر ہے، غربت نہیں غریب نشانے پر ہے، اس وقت کاروبار ہی نہیں غریب کی جیب بھی نشانے پر ہے،میڈیا ہی نہیں میڈیا کی آزادی بھی نشانے پر ہے۔ چند قوانین ہی نہیں پورا آئین نشانے پر ہے۔ ناکام پالیسیوں کی وجہ سے ہمارے صوبے دیوالیہ ہورہے ہیں۔

چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ مرضی کا نتائج حاصل کرنے کے لئے آر ٹی ایس سسٹم ہی بند کردیا جائے، لیاری سے لے کر نائن زیرو تک کا مینڈیٹ چوری کرلیا جائے۔ ہم اس فراڈ الیکشن اور جعلی حکومت کو نہیں مانتے، نالائق اور نااہل عمران خان وزیراعظم بننے کے اہل ہی نہیں، جب تک سلیکشن ہوتے رہیں گے تب تک کٹھ پتلی حکومتیں بنتی رہیں گی۔

Source link

ہم عمران خان اور چیئرمین سینیٹ کو این آر او نہیں دیں گے، مولانا فضل الرحمان

0

پاکستان کو معیشت کے قاتلوں سے نجات دلانی ہوگی،  مولانا فضل الرحمان، فوٹو: فائل

پاکستان کو معیشت کے قاتلوں سے نجات دلانی ہوگی، مولانا فضل الرحمان، فوٹو: فائل

پشاور: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ عمران خان کے لئے جن لوگوں نے مجھے این آر او کے لئے کہا ان کا نام نہیں لوں گا، تاہم اتنا کہتا ہوں کہ ہم نہ چیئرمین سینٹ کو این آر او دیں گے نہ عمران خان کو۔

پشاور میں ملین مارچ جلسے سے خطاب کرتے ہوئے جے یو آئی کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ جعلی وزیراعظم امریکا گئے، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ان کا استقبال کیا، لیکن حقیقت اس کے برعکس ہے، ٹرمپ نے جعلی وزیراعظم کا استقبال نہیں کیا بلکہ  آرمی چیف کا پروٹوکول کے ساتھ استقبال کیا گیا۔

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ عمران خان کے وژن پر ماتم کرنے کا دل چاہتا ہے، ان کے امریکا جلسے کا اہتمام قادیانیوں نے کیا، عمران خان کو یہودیوں کی دوستی مبارک ہو۔ جن لوگوں نے مجھے عمران خان کے لئے این آر او کے لئے کہا ان کا نام نہیں لوں گا، ہم نہ چیئرمین سینٹ کو این آر او دیں گے نہ عمران خان کو۔

سربراہ جے یو آئی نے کہا کہ  جب سوویت یونین مالی اعتبار سے کمزور ہوا تو ختم ہوگیا، آج پاکستان کی معیشت بیٹھ  چکی ہے، ریاست کیسے مستحکم رہے گی، پاکستان کے وسائل کے بھی ہم مالک نہیں اور عالمی ادارے سانپ کی طرح ان پر بیٹھے ہیں، ریکوﮈک کیس میں ہمیں 6 ارب کا جرمانہ ہوگیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ملک میں آئین کی حکمرانی نہیں، ادارے اپوزیشن کے خلاف استعمال ہو رہے ہیں، مہنگائی آسمان پر پہنچ چکی ہے، بجٹ منظور ہونے کے ایک ماہ کے اندر تاجروں نے ہڑتال کردی، پاکستان کو ان معیشت کے قاتلوں سے نجات دلانی ہوگی۔

Source link

سلیکٹڈ نے نئے پاکستان کے نام پر ملک کا بیڑا غرق کردیا، شہباز شریف

0

عوامی خدمت کے بدلے جان بھی چلی جائے توہ پروا نہیں،  شہباز شریف ۔ فوٹو : فائل

عوامی خدمت کے بدلے جان بھی چلی جائے توہ پروا نہیں، شہباز شریف ۔ فوٹو : فائل

 لاہور: پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کا کہنا ہے کہ سلیکٹڈ وزیراعظم نے نئے پاکستان کے نام پر ملک کا بیڑا غرق کردیا۔

ماڈل ٹاؤن لاہور میں کارکنوں سے خطاب کے دوران شہباز شریف نے کہا کہ کارکنوں کو نواز شریف کا سلام پیش کرتا ہوں، لاہور والو! نکلو اور ایک ساتھ ووٹ پر ڈاکے کا حساب لو، آؤ میرے ساتھ چلو۔

شہباز شریف نے کہا کہ ہم حساب لیں گے اسپتالوں سے ادویات کیوں ختم کی گئیں غربت کیسے بڑھی، مہنگائی کیوں ہوئی،  سلیکٹڈ نے نئے پاکستان کے نام پر ملک کا بیڑا غرق کردیا ہے، عوامی خدمت کے بدلے جان بھی چلی جائے توہ پروا نہیں۔

مسلم لیگ (ن) کے صدر نے کہا کہ نواز شریف اور ساتھیوں نے ملک سے اندھیرے ختم کئے مگر انہیں جیل میں ڈالا گیا، جو جیلوں میں پڑے ہیں ان کا ایک ہی قصور ہے انہوں نے غریبوں کی مدد کی۔

Source link

ڈالر کی قدر گرنے کے باوجود کی سونے کی قیمت نے نیا ریکارڈ قائم کردیا

0

عالمی مارکیٹ میں فی اونس سونے کی قیمت1 ڈالر اضافے سے1427 ڈالر پر آگئی۔ فوٹو: فائل

عالمی مارکیٹ میں فی اونس سونے کی قیمت1 ڈالر اضافے سے1427 ڈالر پر آگئی۔ فوٹو: فائل

کراچی: انٹر بینک اور اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قدر گرنے کے باوجود سونے کی نئی قیمت 84 ہزار 400 روپے کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔

ایکسپریس نیوزکے مطابق روپے کی جمعرات کے روز ڈالر کی بے قدری کے باوجود سونے کی قیمت بدستور اونچی اڑان کی جانب گامزن ہے، جمعرات کے روز اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت میں 20 پیسے کی کمی ہوئی جب کہ انٹربینک میں ڈالر 33 پیسے سستا ہوکر 160.45 روپے پر بند ہوا، تاہم ڈالر کی قدر گرنے کے باوجود ملکی صرافہ مارکیٹوں میں سونے کی قیمت نے نیا ریکارڈ قائم کردیا اور فی تولہ سونے کی قیمت 84 ہزار 400 روپے کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: ڈالر کی قیمت بڑھتے ہی سونے کی قیمت کو پر لگ گئے

دوسری جانب عالمی بلین مارکیٹ میں سونے کی فی اونس قیمت میں 1 ڈالر کا اضافہ ہوا اور 1427  ڈالر تک جا پہنچا، عالمی مارکیٹ میں سونے کی قیمت میں اضافے کا اثر ملکی صرافہ مارکیٹوں پر پڑا، اور سونے کی فی تولہ اور دس گرام قیمت میں بالترتیب 200 روپے اور 189 روپے کا اضافہ ہوگیا۔

قیمتوں میں اضافے کے بعد  کراچی، حیدرآباد، سکھر، ملتان، لاہور، فیصل آباد، راولپنڈی، اسلام آباد، پشاور اور کوئٹہ کی صرافہ مارکیٹوں میں فی تولہ سونے کی بڑھ کر 84 ہزار 400 روپے اور دس گرام سونے کی قیمت اضافے کے بعد 72 ہزار 360 روپے ہوگئی۔

 

Source link

ازدواجی زندگی کےلیے احتیاطی تدابیر

0

گھر اداکار کا ہو یا پھر عام انسان کا، ہر قدم پھونک پھونک کر رکھنے کی ضرورت ہے۔ (فوٹو: فائل)

گھر اداکار کا ہو یا پھر عام انسان کا، ہر قدم پھونک پھونک کر رکھنے کی ضرورت ہے۔ (فوٹو: فائل)

یہ الگ بات ہے کہ جب میاں بیوی کے رشتے کے درمیان نفرت انتہا کو پہنچ جائے تو پھر ہلکاپھلکا جھگڑا بھی ایک گھریلو جنگ کی شکل اختیار کرجاتا ہے، جس کا نتیجہ ہمیشہ کی علیحدگی کی صورت میں نکلتا ہے۔ یہ نتیجہ مرد کو کم اور عورت کو زیادہ متاثر کرتا ہے۔ معاشرے میں سارے سوال عورت پر ہی اٹھتے ہیں اور اس کی ذات مرد کی نسبت زیادہ اذیتوں سے دوچار ہوتی ہے۔ بعض دفعہ عورت کی عمر یا اس کی کچھ ایسی مجبوریاں اس کی پاؤں کی اتنی مضبوط زنجیر بن جاتی ہیں کہ وہ نئے سرے سے زندگی کا سفر بھی شروع نہیں کرسکتی۔

معمولی سی بات سے شروع ہونے والی لڑائی جب خوفناک شکل اختیار کرتی ہے تو پھر نتیجہ دونوں کے سامنے ہوتا ہے، مگر پھر بھی بعض اوقات نہ وہ خود صلح کی طرف بڑھتے ہیں، نہ قریبی رشتے دار اس میں کردار ادا کرتے ہیں۔ یوں کہہ لیں کہ میاں بیوی کی گھریلو لڑائی دنیا پر ظاہر ہوتے ہی مرد و زن ایک تماشے کی شکل اختیار کرجاتے ہیں، جسے ختم کرنے والے کم اور تماشا دیکھنے والے زیادہ ہوتے ہیں۔ محسن عباس اور فاطمہ سہیل کے درمیان بھی تنازعہ آج کل ہر طرف زیربحث ہے اور میڈیا کی بھی گرماگرم خبر ہے۔ مگر اسے ایک خبر سے ہٹ کر بھی دیکھنے کی ضرورت ہے اور اس جھگڑے کی گتھیاں سلجھا کر دونوں کو ایک ساتھ بٹھانے میں کردار ادا کرنے کی بھی ضرورت ہے۔ مگر ایسا کچھ نظر نہیں آرہا۔

فاطمہ کے تمام الزامات کو محسن نے قرآن پاک پر ہاتھ رکھ کر رد کردیا ہے کہ وہ اس رشتے کو نبھانے کی پوری کوشش کرتا رہا، مگر زیادتی فاطمہ کی طرف سے کی گئی۔ جبکہ فاطمہ نے خود کو سچا اور محسن کو ظالم اور ذہنی مریض ثابت کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ میرا سوال ان دونوں کے رشتے داروں اور انتہائی قریبی دوستوں سے ہے کہ کیا میڈیا پر عزتیں اچھالنا ہی اس مسئلے کا حل ہے؟

وہ لوگ جو اس میں کردار ادا کرسکتے ہیں، کیا ان کی ذمے داری نہیں کہ وہ گھر میں بیٹھ کر اس مسئلے کو آرام سے حل کرلیں۔ کیا آج کے اس ڈھنڈورے سے ان کے بچے کے مستقبل پر اثر نہیں پڑے گا؟ کل کو وہ بڑا ہوکر جب ان خبروں اور ویڈیوز کو دیکھے گا، جس میں اس کے والدین دنیا میں تماشا بن کر رہ گئے۔ تو کیا سوچے گا کہ میرے بچپن کو والدین کی شفقت سے محروم کرنے کا ذمے دار کون ہے؟ ان گنت سوالات ہیں جو اس معصوم کے ذہن میں ابھریں گے، مگر شاید تب اسے کوئی جواب دینے والا نہ ملے۔

پیار ایک خوبصورت احساس ہے اور یہ ایک ایسی طاقت ہے جس سے انسان مشکل کو بھی ہنسی خوشی آسانی میں بدل سکتا ہے۔ مگر یہی پیار قربانی کا بھی تقاضا کرتا ہے۔ صبروتحمل، برداشت اور ایک دوسرے کے احترام کا بھی تقاضا کرتا ہے۔ یہ پیار جہاں محسن سے غصے کو پی جانے کا تقاضا کررہا ہے، وہیں فاطمہ سے بھی زخم بھلانے کا تقاضا کرتا ہے۔ یہ پیار بچے کے مستقبل کی خاطر سمجھوتہ کرکے پھر سے شروعات کرنے کا تقاضا کرتا ہے۔ غلط فہمیاں یقیناً تعلقات میں دراڑیں ڈالنے کی بڑی وجہ ہیں۔ مگر ان غلط فہمیوں کو پیدا ہونے سے قبل ہی اپنی فہم وفراست کا استعمال کرکے سرے سے ختم کرنا بھی انسان کے بس میں ہی ہے۔

محسن عباس نے قرآن پاک پر ہاتھ رکھ کر یہ ثابت کرنے کی کوشش کی ہے کہ اس کا موقف درست ہے۔ ساری برداشت اس نے کی ہے، فاطمہ نے اسے سمجھنے کی کوشش نہیں کی اور نہ ہی گھر بسانے کی کوشش کی ہے۔ بہت سی ایسی باتیں محسن نے کیں جنہیں کوئی بھی سن کر فاطمہ کو ہی قصووار ٹھہرا سکتا ہے۔ مگر کچھ باتیں فاطمہ کی کہانی بھی بیان کرتی ہیں۔ اب اس کہانی کی سچائی کیا ہے، یہ میں اور آپ تو سو فیصد نہیں جانتے، مگر میاں بیوی تو اس بات کو جانتے ہیں کہ کہاں پر کون غلط ہے اور کون صحیح ہے۔ یقیناً دونوں طرف کے خاندان حقائق سے بخوبی آگاہ ہیں۔

دونوں کے الزامات کی بوچھاڑ تو تب تک ہوتی رہے گی، جب تک اس کہانی کا اختتام نہیں ہوجاتا۔ ایسا کیا، کیا جائے کہ یہ گھر اجڑنے سے بچ جائے اور کون سی احتیاطی تدابیر اختیار کرکے دوبارہ ایسے جھگڑوں سے بچا جاسکتا ہے؟

میاں بیوی خواہ کسی بھی شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھتے ہوں، سب سے پہلا کام ایک دوسرے پر اعتماد کریں۔ اس اعتماد کا معیار یہ ہونا چاہیے کہ جیسے انسان خود پر اعتبار کرتا ہے۔

غلط فہمی انسانی ذہنی میں اکثر پیدا ہوجاتی ہے، جس پر کنٹرول تو نہیں کیا جاسکتا مگر اسے دور کرنا ممکن ہے۔ تیسرے شخص سے پوچھنے کے بجائے خود ہی ایک دوسرے سے غلط فہمی پر بات چیت کرکے اسے ختم کیا جاسکتا ہے۔ لیکن یہ تبھی ہوگا، جب میاں بیوی کے درمیان اعتماد کا پختہ رشتہ ہوگا۔

اپنے دوست اور دشمن کی پہچان کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ خاندان، دوست، محلے دار اور کوئی عام انسان بھی ہوسکتے ہیں۔ دشمن کبھی آپ کو خوشگوار زندگی گزارتے دیکھ کر خوش نہیں رہ سکتا۔ وہ سازش کرے گا اور اس سے کبھی خیر کی توقع نہیں کرنی چاہیے، نہ ہی دشمن کو کمزور سمجھا جائے۔

میاں بیوی دونوں کو ہی اپنے اندر ایک سوچ پیدا کرنے کی ضرورت ہے کہ سسرال کو بھی سگے رشتے داروں کی طرح دل میں جگہ دیں، تاکہ وہ آپ کے اخلاق سے متاثر ہوکر آپ کی دل سے قدر کریں اور آپ کے لائف پارٹنر کے دل میں کسی بھی وقت کوئی منفی بات ڈالنے کا نہ سوچ سکیں۔

میاں بیوی شادی کے بعد دو الگ الگ انسان نہیں، بلکہ یک جان ہونے چاہئیں، تاکہ درمیان میں کوئی ایسی خالی جگہ نہ ہو جسے کوئی تیسرا پُر کرنے کی کوشش کرے۔ ایک دوسرے کا احترام، جائز خواہشات کی تکمیل، ضروریات زندگی، اخراجات اور حتی الامکان ایک دوسرے کو وقت دینے کی ضرورت ہے۔

ہلکی پھلکی غلط فہمی پر بحث کی صورت میں صبروتحمل اور برداشت کا دامن تھام کر رکھیں۔ ایک لڑ رہا ہے تو دوسرا خاموشی اختیار کرے، کیوں کہ غصے کے وقت جواب دینے سے لڑائی مزید بڑھ جاتی ہے۔ البتہ دماغ ٹھںڈا ہونے کے بعد پیار سے اپنا موقف ضرور بتائیں، تاکہ دوسرا یہ نہ سمجھے کہ وہی درست تھا اور آپ غلط۔

مرد کا دیگر خواتین کے ساتھ دوستیاں بنانا، دوستی کے نام پر حد سے تجاوز کرنا اور اس سے ملتے جلتے اعمال، چاہے عورت برداشت کرلے، مگر خواتین اپنے شوہر کی ایسی حرکتیں پسند کرتی ہیں اور نہ ہی برداشت کرتی ہیں۔ لہٰذا ایسی غلطیاں جو واقعی غلطیاں ہیں، ان سے بچنا ہی گھریلو سکون کا ضامن ہوسکتا ہے۔ یہ چیزیں مرد بھی اپنی خواتین سے توقع کرتے ہیں، بلکہ عورت کی نسبت زیادہ امید کرتے ہیں، کیوں کہ غیرت کے معاملے میں مرد خود چاہے جو مرضی کرتا پھرے (حالانکہ اسے کرنا نہیں چاہیے) مگر اپنی عورت چاہے وہ کسی بھی رشتے سے منسلک ہو، برداشت نہیں کرتا اور کئی مقامات پر معاملہ قتل تک پہنچ جاتا ہے۔ اس لیے اپنے خاندان، علاقے اور روایات کو دیکھتے ہوئے خود کو ایسی باتوں سے دور رکھنے میں ہی عافیت ہے۔ اگر اعتماد ہو تو پھر ایسے معاملات میں جھگڑے کی شرح انتہائی کم رہ جاتی ہے۔

ازدواجی زندگی مرد و خواتین، دونوں کے گرد ہی ایک دائرے کی طرح ہے۔ مختلف ممالک اور طبقات میں یہ دائرہ مختلف ہوسکتا ہے۔ دونوں میں سے جو بھی اس دائرے سے باہر نکلے گا، دنیا جاتی ہے کہ اس کا انجام اچھا نہیں ہوتا۔ لہٰذا ہر طبقے کے مرد و خواتین کو اپنے اس دائرے کو بھی پہچاننے کی ضرورت ہے، تاکہ ان سے باہر نکلنے سے بچ سکیں۔

لو میرج کرنے والوں کو بطورخاص محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ مرد و خواتین دونوں ہی اس معاملے میں انتہائی حساس ہوتے ہیں۔ خاص طور پر عاشق مزاج مرد کو صنف نازک میں دلچسپی زیادہ ہوتی ہے، لہٰذا اس کی آنکھیں ہمیشہ خوب سے خوب تر کی تلاش میں رہتی ہیں۔ پیار کرنے والے اپنے تعلق میں دراڑ پیدا نہ ہونے دیں، ورنہ کوئی دوسری عورت یا مرد اس دراڑ میں گھس جائے گا اور کسی بھی وقت حملہ آور ہوسکتا ہے، جس کے بعد بڑے نقصان کا اندیشہ ہے۔

اداکارہ میرا، صنم بلوچ، وینا ملک، فضا علی، متھیرا اور اب محسن عباس حیدر اور فاطمہ سہیل کے تنازعات ان کی زندگیوں میں زہر بن کر آئے اور خوشگوار ازدواجی زندگی اور پیار کی موت بن گئے۔ غلط فہمیوں نے ان جیسے کتنے ہی میاں بیوی کو ایک دوسرے کا دشمن بنادیا۔ کہیں دونوں کی راہیں جدا ہوئیں، تو کہیں بچے بھی والدین کی شفقت سے محروم ہوگئے۔

گھر اداکار کا ہو یا پھر عام انسان کا، اس کے آنگن میں خوشیاں ہی اچھی لگتی ہیں، غموں کے سائے میں زندگی کی کٹھن راہوں پر سفر پاؤں کو لہولہان کردیتا ہے۔ میاں بیوی کو خوشگوار زندگی گزارنا ہے تو پھر ایک ایک قدم پھونک پھونک کر رکھنے کی ضرورت ہے۔ کیوں کہ اگر آپ اسے پھولوں کی سیج سمجھ رہے ہیں تو یہ کانٹوں سے بھی بھری پڑی ہے۔ اگر حقائق کو سمجھداری کی عینک سے نہیں دیکھیں گے تو انجام کیا ہوتا ہے؟ ایسے قصے کہانیوں سے ماضی کے اوراق بھرے پڑے ہیں۔

نوٹ: ایکسپریس نیوز اور اس کی پالیسی کا اس بلاگر کے خیالات سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ بھی ہمارے لیے اردو بلاگ لکھنا چاہتے ہیں تو قلم اٹھائیے اور 500 سے 1,000 الفاظ پر مشتمل تحریر اپنی تصویر، مکمل نام، فون نمبر، فیس بک اور ٹوئٹر آئی ڈیز اور اپنے مختصر مگر جامع تعارف کے ساتھ [email protected] پر ای میل کردیجیے۔

Source link

Must Read